148,254 views 193 on YTPak
389 22

Published on 31 Oct 2011 | over 5 years ago

وہ ہمسفر تھا مگر اُس سے ہمنوائی نہ تھی
کہ دھوپ چھاؤں کا عالم رہا، جدائی نہ تھی

عداوتیں تھیں، تغافل تھا، رنجشیں تھیں مگر
بچھڑنے والے میں سب کچھ تھا، بےوفائی نہ تھی

بچھڑتے وقت، اُن آنکھوں میں تھی ہماری غزل
غزل بھی وہ، جو کسی کو ابھی سنائی نہ تھی

کبھی یہ حال کہ دونوں میں یک دلی تھی بہت
کبھی یہ معاملہ، جیسے کہ آشنائی نہ تھی

کسے پکار رہا تھا وہ ڈوبتا ہوا دن
صدا تو آئی تھی، لیکن کوئی دہائی نہ تھی

عجیب ہوتی ہے راہ سخن بھی دیکھ نصیر
وہاں بھی آ گئے آخر، جہاں رسائی نہ تھی

شاعر۔۔: نصیر ترابی

-_-_-_--_-_-_--_-_-_--_-_-_--_-_-_--_-_-_--_-_-_-
Wo Hmsfar Hamsfar Tha Magar Us Sy Hamnawai Na Thi
K Dhoop Chaao'n Ka Aalam Raha, Judai Na Thi

Adawten then, Tgaful tha, ranjishen then magar,
Bicharrny waly mein sb kuch tha, bewafai na thi

Bicharrty wqt un aankhon mein thi hmari ghazal
Ghazal bhi wo jo ksi ko abhi sunai na thi

Kbhi ye haal k dono mein yak dili thi bohat
kabhi ye mamla jesy k aashnai na thi

Kisy pukaar raha tha wo Dobta howa din
Sada to aai thi lekin koi duhaai na thi

Ajeeb hoti hai raah-e-sukhan bhi daikh Naseer
Wahan bhi aa gaye aakhir, jahan rsaai na thi

WWW.FaceBook.Com/ChessMaster3399

Loading related videos...