48,104 views 195 on YTPak
50 17

Published on 29 May 2009 | over 7 years ago

this poem was in Urdu text book of primary section and most of Us remembered it by heart :)
the cuteness of this poem increases more because it brings childhood memories back..
[IQBAL for Kids by EMI]
ايک پہا ڑ اور گلہري
(ماخوذ از ايمرسن)
(بچوں کے ليے)

کوئي پہاڑ يہ کہتا تھا اک گلہري سے
تجھے ہو شرم تو پاني ميں جا کے ڈوب مرے
ذرا سي چيز ہے ، اس پر غرور ، کيا کہنا
يہ عقل اور يہ سمجھ ، يہ شعور ، کيا کہنا!
خدا کي شان ہے ناچيز چيز بن بيٹھيں
جو بے شعور ہوں يوں باتميز بن بيٹھيں
تري بساط ہے کيا ميري شان کے آگے
زميں ہے پست مري آن بان کے آگے
جو بات مجھ ميں ہے ، تجھ کو وہ ہے نصيب کہاں
بھلا پہاڑ کہاں جانور غريب کہاں!
کہا يہ سن کے گلہري نے ، منہ سنبھال ذرا
يہ کچي باتيں ہيں دل سے انھيں نکال ذرا
جو ميں بڑي نہيں تيري طرح تو کيا پروا
نہيں ہے تو بھي تو آخر مري طرح چھوٹا
ہر ايک چيز سے پيدا خدا کي قدرت ہے
کوئي بڑا ، کوئي چھوٹا ، يہ اس کي حکمت ہے
بڑا جہان ميں تجھ کو بنا ديا اس نے
مجھے درخت پہ چڑھنا سکھا ديا اس نے
قدم اٹھانے کي طاقت نہيں ذرا تجھ ميں
نري بڑائي ہے ، خوبي ہے اور کيا تجھ ميں
جو تو بڑا ہے تو مجھ سا ہنر دکھا مجھ کو
يہ چھاليا ہي ذرا توڑ کر دکھا مجھ کو
نہيں ہے چيز نکمي کوئي زمانے ميں
کوئي برا نہيں قدرت کے کارخانے ميں

اقبال نے اپنی شاعری کے ابتدائی دور میں منظوم ترجموں کی طرف توجہ کی۔
جس طرح اردو شاعری کی اہم صنف منظوم ترجمہ پر اس وقت تک بہت کم توجہ دی گئی ہے، اسی طرح اگر اقبال کی شاعری کے کسی گوشہ کو قریب قریب نظر انداز کیا گیا ہے تو وہ اقبال کے منظوم ترجمے ہیں۔ حالانکہ اقبال ن جو منظوم ترجمے کئے ہیں ان کے علاوہ ان کی شاعری کا ایک قابلﹺ لحاظ حصہ ایسا بھی ہے جو مغربی شعرا کے کلام سے متاثر ہے۔
\
اقبال نےانگریزی ادب کا بنظر غائرمطالعہ کیا تھا اوراس پر ان کی گہری نظرتھی۔ یورپ اور انگلستان کے قیام اور وہاں کی تعلیم کے دوران انگیزی ادب سےان کی دلچسپی میں اضافہ ہوا۔
اپنی ابتدائی شاعری میں اقبال نے مغربی شاعروں سے بھر پور استفادہ کیا۔ اس کے متعلق لکھتے ہیں۔

"میں اعتراف کرتا ہوں کہ میں نے ہیگل، گوئٹے، غالب، بیدل، اور ورڈسورتھ سے
بہت استفادہ کیا ہے۔ ہیگل اور گوئٹے نے اشیاء کی باطنی حقیقت تک پہنچنے میں میری رہنمائی کی۔ غالب اور بیدل نے مجھے یہ سکھایا ہے کہ مغربی شاعری کے اقدار کو سمولینے کے باوجود اپنے جذبہ اور اظہار میں مشرقیت کی روح کو کیسے زندہ رکھوں اور ورڈسورتھ نے طالب علمی کے زمانے میں مجھے دہریت سے بچالیا

Loading related videos...